8 Jul 2020

MA Urdu Part.1 Punjab university Past Paper .1 Classical Poetry 2019



ایم اے اُردو  پارٹ 1

پنجاب یونیورسٹی                                                                                                                                                                                            کلاسیکل شاعری                                                                                      2019

وقت 3  گھنٹے                                                          پیپر 1                                                        کُل نمبر 100

نوٹ: کُل پانچ سوالات کے جوابات مطلوب ہیں حصہ اول میں سے دو اور باقی ہر حصے میں سےایک ایک سوال کاجواب تحریر کریں

1۔ ولی کی غزل گوئی کی لسانی او ر فنی خصوصیات قلمبند کریں؟

2۔ غزل گوئی میں آتش کی مر صع سازی پر بھرپور روشنی ڈالیے؟

3۔ خواجہ میر درد اُردو کے اہم صوفی شاعر ہیں،مدلل تائیدیا تردید کیجیے؟

4۔ مومن کی شاعری کی فکری و فنی خصوصیات تحریر کریں؟

(حصہ دوم)

5۔ مثنوی سحر البیان کی اہم خصوصیات قلمبند کیجیے؟

6۔ مثنوی نگاری کے اہم تقاضوں کے پیش نظر گُلزار نسیم کا جائزہ پیش کیجیے؟

(حصہ سوم)

7۔ میر انیس کی مرثیہ نگاری کی اہم خصوصیات پر بھر پور مضمون تحریر کریں؟

8۔ مرزا سودا کے قصائد کے فکری و فنی  محاسن پر نوٹ تحریر کیجیے؟

(حصہ چہارم)

9۔حوالہ متن کی نشاندہی کرتے ہوئے کسی ایک جُز کی تشریح کریں اور فنی محاسن کی نشاندہی بھی کیجیے؟

(الف)             ہوں کشتہ تغافل  ہستی بے ثبات                                                                            خاطر سے کون کون نہ اس نے بُھلا دیے

                                                                                                                                                                                                 یا رب! یہ کیا خرام ہے جس نے ایک آن میں                                                                         کتنے ہی مُردے حشر  سے آگے جلا دیے

                                                                                                                                                                                            عا لم میں جتنے پاک گہر تھے سو ایک ایک                                                                                                                                                                          اولے سے روزگار نے یوں ہی گھلا دیے

                                                                                                                                                                                                       چاہو وفا کرو نہ کرو اختیا ر ہے                                                                                                                                  خطرے جو اپنے جی میں تھے وہ سب اُٹھا دیے

یا

(ب)                                                           یار ہی کلبہ احزاں میں نہ ہووے تو ہمیں                                                         خلوت و شمع و دل و داغ یلم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                       باد تندو شرر برق و خس و خار اے یار                                                                                                                                        خوتری خلق ہوئی ہو کے بہم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                     سبزہ و ابر و ہوا، گُل، نہ سدا ہوں یکجا                                                                                                                                                               ساقیا جام کہ ہیں یہ کوئی دام چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                 کر دیا پل میں کرشمے نے تری آنکھوں کے                                                               مسجد و مے کدہ و دیر و حرم چا روں ایک 

----------------------------------

 

ایم اے اُردو  پارٹ 1

پنجاب یونیورسٹی                                                                                                                                                                                            کلاسیکل شاعری                                                                                      2018

وقت 3  گھنٹے                                                          پیپر 1                                                        کُل نمبر 100

نوٹ: کُل پانچ سوالات کے جوابات مطلوب ہیں حصہ اول میں سے دو اور باقی ہر حصے میں سےایک ایک سوال کاجواب تحریر کریں

1۔ ولی کی شاعری کی فکری و فنی خصوصیات پر تفصیل سے روشنی ڈالیے؟

2۔ مومن خان مومن کی غزل کے فنی محاسن بیان کیجیے؟

3۔ داغ کی غزل میں پائے جانے والے فکری و فنی محاسن کا تنقیدی  جائزہ لیجیے؟

4۔ خواجہ حیدر علی آتش کی غزل  فکرو فن کا حسین امتزاج ہے تائید یا تردید کیجیے؟

(حصہ دوم)

5۔ مثنوی سحر البیان  دہلوی تہذیب و معاشرت کی عکاسی کرتی ہے،وضاحت کیجیے؟

6۔ مثنوی  گُلزار نسیم کی لفظی و معنوی خوبیوں پر تفصیلی نوٹ تحریر کیجیے؟

(حصہ سوم)

7۔ میر انیس کی مرثیہ نگاری کی نمایاں خصوصیات کیا ہیں مثالیں دے کر واضح کریں؟

8۔ نظیر اکبر آبادی کی نظم نگاری پر تفصیل سے اظہارِ خیال کیجیے؟

(حصہ چہارم)

9۔حوالہ متن کی نشاندہی کرتے ہوئے کسی ایک جُز کی تشریح کریں اور فنی محاسن کی نشاندہی بھی کیجیے؟

(الف)             ہوں کشتہ تغافل  ہستی بے ثبات                                                                            خاطر سے کون کون نہ اس نے بُھلا دیے

                                                                                                                                                                                                 عنقاد کی طرح جتنے تھے یاں نامور فلک                                                                         تو نے خدا ہی جانے کہ کدھر اُڑا دئیے

                                                                                                                                                                                            پگھلا دل اثر نہ مرے حل پر کبھی                                                                                                                                                      ہر چند روتے روتے میں نالے بہا دئیے

                                                                                                                                                                                                       یا رب یہ کیا خرام ہے جس نے اک آن میں                                                                                                                       کتنے ہی مُردے حشر سے آگے جلا دئیے

یا

(ب)                                                           حیرت کی نہیں جائے کہ دیوارِ چمن پر                                                                                                       ہر طائر تصویر کرے نغمہ سرائی

                                                                                                                                                                                                                       باد تندو شرر برق و خس و خار اے یار                                                                                                                                        خوتری خلق ہوئی ہو کے بہم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                     شاہا! ترے جلوے سے ہے یہ عید کو رونق                                                                                                                                                            عالم نے تجھے دیکھ کے ہے عید منائی

                                                                                                                                                                                                 کہتے ہیں مہ نو جسے ابرو ابرو نے وہ تیری                                                                      کی آئینہ چرخ میں ہے جلوہ نمائی

                                                                                                                                                                                     پر تو سے ترے جام مئے عیش سر بزم                                                                                                                                           لے ساغر جمشید کرے کاروائی 

----------------------------------

   

ایم اے اُردو  پارٹ 1

پنجاب یونیورسٹی                                                                                                                                                                                            کلاسیکل شاعری                                                                                      2018

وقت 3  گھنٹے                                  سالانہ               پیپر 1                      کُل نمبر 100

نوٹ: کُل پانچ سوالات کے جوابات مطلوب ہیں حصہ اول میں سے دو اور باقی ہر حصے میں سےایک ایک سوال کاجواب تحریر کریں

1۔ ولی ایک جمال دوست اسلوب پرست شاعر ہے مثالوں سے وضاحت کریں؟

2۔ آتش کی غزل کی فنی خصوصیات تفصیل سے بیان کیجیے؟

3۔ خواجہ میر درد کی شاعری میں تصوف کا عنصر غالب ہے مثالوں سے واضح کریں؟

4۔داغ کی شاعری کی فکری و فنی خصوصیات  تفصیل سے بیان کیجیے؟

(حصہ دوم)

5۔ مثنوی سحر البیان  کی کردار نگاری پر تفصیل سے روشنی ڈالیے؟

6۔ مثنوی  گُلزار نسیم کے فنی محاسن مثالیں دے کر واضح کریں؟

(حصہ سوم)

7۔ نظیر اکبر آبادی کی شاعری عوامی مشاغل اور سرگرمیوں کی عکاسی کرتی ہے وضاحت کیجیے؟

8۔ شیخ ابراہیم ذوق کے قصائد کی خصوصیات پر تفصیلی نوٹ تحریر کیجیے؟

(حصہ چہارم)

9۔حوالہ متن کی نشاندہی کرتے ہوئے کسی ایک جُز کی تشریح کریں اور فنی محاسن کی نشاندہی بھی کیجیے؟

(الف)             دشنام یار طبع حزیں پر گراں نہیں                                                                                     اے ہم نفس نزاکت کی آواز دیکھنا

                                                                                                                                                                                                 دیکھ اپنا حال زار منجم ہوا رقیب                                                                                        تھا ساز گار طالع نا ساز دیکھنا

                                                                                                                                                                                            بد کام کا مآل بُرا ہے جزا کے دِن                                                                                                                                                      حال سپہر تفرقہ انداز دیکھنا

                                                                                                                                                                                                       میری نگاہ خیرہ دکھاتے ہیں غیر کو                                                                                                                  بے طاقتی پہ سرزنش ناز دیکھنا

یا

(ب)                                                           زاہدو پیر مغاں'  برہمن و شیخ اے یار                                                                                                                  دل میں رکھتے ہیں ترے ہاتھ سے غم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                       کر دیا پل میں کرشمے نے تری آنکھوں کے                                                                                                                                        مسجدو مے کدہ و دیرو حرم ایک

                                                                                                                                                                                                                     شاہ مرداں تری خلقت جو نہ ہوتی منظور                                                                                                                                                                       ہوتے عنصر نہ کبھی مل کے بہم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                    دشمن و دوست بد  و نیک زمانے کے بیج                                                                                            حکم رکھتے ہیں ترے پیش کرم چاروں ایک

----------------------------------

  

ایم اے اُردو  پارٹ 1

پنجاب یونیورسٹی                                                                                                                                                                                            کلاسیکل شاعری                                                                                      2017

وقت 3  گھنٹے                                  سپلی                  پیپر 1                      کُل نمبر 100

نوٹ: کُل پانچ سوالات کے جوابات مطلوب ہیں حصہ اول میں سے دو اور باقی ہر حصے میں سےایک ایک سوال کاجواب تحریر کریں

1۔ ولی   دکنی کی شاعری کے نشاطیہ عنصر کی وضاحت شعری مثالوں سے کیجیے؟

2۔ مومن کی شاعری کے فکری و فنی محاسن پر روشنی ڈالیں؟

3۔ داغ کی شاعری کے فکری و فنی محاسن پر روشنی ڈالیں؟

4۔داغ دہلوی کی غزل میں پائی جانے والی زبان و بیان کی خوبیوں پر تفصیلی اظہارِ خیال کریں؟

(حصہ دوم)

5۔ مثنوی سحر البیان  میں معاشرت کی عکاسی کی گئی ہے شعری مثالوں سے واضح کریں؟

6۔ مثنوی  گُلزار نسیم کی فنی خصوصیات پر تفصیل سے روشنی ڈالیے؟

(حصہ سوم)

7۔ سودا کی قصیدہ نگاری  کے جُملہ عناصر بیان کریں؟

8۔ نظیر اکبر آبادی  کی شاعری کی خصوصیات بیان کریں؟

(حصہ چہارم)

9۔حوالہ متن کی نشاندہی کرتے ہوئے کسی ایک جُز کی تشریح کریں اور فنی محاسن کی نشاندہی بھی کیجیے؟

(الف)                                وحدت نے ہر طرف ترے جلوے دکھا دیے                                                                                    پردے تعینات کے جو تھے اٹھا دیے

                                                                                                                                                                                                                                               عالم میں جتنے پاک گہر تھے سو ایک ایک                                                                                                                              اولے سے روزگار نے یوں ہی گھلا دیے

                                                                                                                                                                                                                                               دونوں جہان کی نہ رہی پھر خبر اسے                                                                                                                                                                                                                  دو پیالے تری آنکھوں  نے جس کو پلا دیے

یا

(ب)                                                           ساون میں دیا پھر منہ شوال دکھائی                                                                                                                                              برسات میں عید آئی قدح کش کی بن آئی

                                                                                                                                                                                                                                        کرت ہے ہلال ابروئے پر خم سے اشارہ                                                                                                                                                               ساقی کو کہ بھر بادے سے کشتی طلائی

                                                                                                                                                                                                                                     ہے عکس فگن جام بلورین سے مئے سرخ                                                                                                                                                                           کس رنگ سے ہوں ہاتھ نہ مے کش کے حنائی

---------------------------------- 

 


 

ایم اے اُردو  پارٹ 1

پنجاب یونیورسٹی                                                                                                                                                                                            کلاسیکل شاعری                                                                                      2017

وقت 3  گھنٹے                                  سالانہ               پیپر 1                      کُل نمبر 100

نوٹ: کُل پانچ سوالات کے جوابات مطلوب ہیں حصہ اول میں سے دو اور باقی ہر حصے میں سےایک ایک سوال کاجواب تحریر کریں

1۔ خواجہ میر درد  کی شاعری میں تصوف کے عناصر کی نشاندہی کریں؟

2۔ مومن کی شاعری کے فکری و فنی محاسن پر روشنی ڈالیں؟

3۔ داغ کی شاعری کے فکری و فنی خصوصیات تحریر کریں؟

4۔آتش کی شاعری کی نمایاں خصوصیات پر روشنی ڈالیں؟

(حصہ دوم)

5۔ مثنوی سحر البیان وہ کون سی خصوصیات ہیں جنہوں نے اسے شہرتِ دوام عطا کی؟

6۔ مثنوی  گُلزار نسیم کی کردار نگاری  روشنی ڈالیے؟

(حصہ سوم)

7۔ میر انیس کے مر ثیوں کی فنی خصوصیات  شعری مثالوں کے ساتھ بیان کریں؟

8۔ نظیر اکبر آبادی  کی شاعری  میں متنوع موضوعات ملتے ہیں مثا لیں دے کر  واضح کریں؟

(حصہ چہارم)

9۔حوالہ متن کی نشاندہی کرتے ہوئے کسی ایک جُز کی تشریح کریں اور فنی محاسن کی نشاندہی بھی کیجیے؟

(الف)                                آئینہ سینہ صاحب نظراں ہے کہ جو تھا                                                                                                                                               چہرہ شاہد مقصود عیاں ہے کہ جو تھا

                                                                                                                                                                                                                                               عالم حسن خداداد بتاں ہے کہ جو تھا                                                                                                                                     نازو انداز بلائے دل و جاں ہے کہ جو تھا

                                                                                                                                                                                                                                                    دولت عشق کا گنجینہ وہی سینہ ہے                                                                                                                                                                                                            داغ دل،زخم جگر،مہرو نشاں ہے کہ جو تھا

یا

(ب)                                                               یارو مہتاب گل و شمع بہم چاروں ایک                                                                                                                                            میں'کتاں' بُلبل و پروانہ' یہ ہم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                                                     ہے مُجھے ابرو ہوا شیشہ و جام اب کے ہوئے                                                                                                                                   گریہ و  نالہ' دل و دیدہ نم چاروں ایک

                                                                                                                                                                                                                                        یار ہی کلبہ احزاں میں نہ ہوئے تو ہمیں                                                                                                                                                                           خلوت و شمع و دل  و داغ الم چاروں ایک

----------------------------------

1 comment:

  1. Sir G plz ap MA Urdu pe kaam jari rakhen mn ne apko 1 year before cal ki thi is k lye

    ReplyDelete